اتحاد کے لیے اپنی کوششیں جاری رکھونگا۔نواب براہمدغ بگٹی

جنیوا(ریپبلکن نیوز)بلوچ آزادی پسند رہنما ء و قائد بلوچ ریپبلکن پارٹی نواب براہمدغ بگٹی نے عوامی رابطوں کے سلسلے میں لوگوں کے جوابات پر مبنی اپنی ایک ویڈیو جاری کی ہے جس میں ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان میرا وطن ہے میں وہی پر پیدا ہوا لیکن اس وقت حالات کی وجہ سے آنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے لیکن بلوچستان میرا وطن ہے ضرور آؤنگا۔ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ پاکستانی ریاست سے کوئی مزاکرات نہیں ہورہا لیکن بی آر پی سیاسی پارٹی ہے اور ہم سیاسی جدوجہد پر یقین رکھتے ہیں اور ہر مسلئے کو سیاسی طریقے سے حل کرنے کے حق میں ہیں۔اگر ریاست سے کسی بھی طرح کی کوئی بات چیت یا کوئی پیش رفت ہوتی ہے تو ماضی کی طرح بلوچ قوم کو آگاہ کیا جائے گا۔ ان کا مزید کہنا تھا بی آر پی کی ہمیشہ سے کوشش رہی ہے کہ سب کو اکھٹا کر کے اجتماعی سوچ کے ساتھ آگے بڑھے۔ سنگل پارٹی کے قیام کے لیے بے پناہ کوششیں کیں اورآگے بھی کرتے رہیں گے۔ بہت سی مجبوریوں کی وجہ سے دوستوں کیلئے اتحاد کو عملی جامعہ پہنانے میں مشکلات درپیش ہورہی ہیں بلوچ تحریک اور قومی اتحاد کی خاطر سب سے پہلے اپنی پارٹی کو تحلیل کرنے کیلئے بھی تیار ہیں باقی دوست بھی آگے بڑھیں اور تحریک کو مضبوط و منظم کرنے کیلئے کوششوں کا حصہ بنیں۔ سوشل میڈیا کے حوالے سے پوچھے گئے سوال پر بلوچ رہنما ء کا کہنا تھا کہ میں سنگت و کارکنان کو درخواست کرتا ہوں کہ آپسی جھگڑے اور بے اخلاقی سے اجتناب کریں اور کوشش کریں کہ بجائے پاکستانی غلیظ صحافت کے طرز کو اپنانے کے سوشل میڈیا کو ریاست کے خلاف قومی مفاد کیلئے استعمال کریں۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ہم نے اپنی پوری زندگی تحریک میں گزاری، ہزاروں بلوچ ورنا شہید ہوئے اور ہزاروں آج بھی پابند سلاسل ہیں۔ بلوچ نوجوانوں سے گزارش ہے کہ آگے بڑھیں اور اپنی بساط کے مطابق تحریک میں اپنا حصہ ڈالیں۔ ایک نوجوان کے سوال پر کہ وہ کس طرح بلوچ قومی تحریک میں اپنا کردار ادا کرسکتے ہیں کے جواب میں نواب براہمداغ بگٹی کا کہنا تھا کہ یہ ایک انتہائی خوش آئند بات ہے کہ اگر کسی سے پہلے بلوچ تحریک میں کردار ادا نہیں ہوسکا تو اب بھی وقت ہے اور بلوچ تحریک کو بلوچ نوجوانوں اور بلوچ قوم کی شمولیت اور فعال کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم نے اپنی زندگی اس تحریک میں گزار دی جس کے دوران ہزاروں بلوچ نوجوان سرزمین کی خاطر جدوجہد کرتے ہوئے شہید ہوئے اور ہزاروں آج بھی قید و بند کی صحوبتیں برداشت کررہے ہیں۔ ہم ہر وقت اور ہر سطح پر بی آر پی کے پلیٹ فارم سے نوجوانوں اور جہدکاروں کی رہنمائی کرنے کیلئے تیار ہیں۔ ہم نوجوانوں کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ آگے بڑھیں اور ہم سے رابطہ کرکے بلوچ تحریک میں کردار ادا کریں۔ ان سے ایک نوجوان نے پوچھا کہ وہ بین الاقوامی سطح پر بلوچ تحریک کیلئے کردار ادا کرنا چاہتے ہیں تو اس کیلئے وہ کیا کرسکتے ہیں۔ اس کے جواب میں بی آر پی کے قائد نے کہا کہ بی آر پی کی ہمیشہ کوشش رہی ہے کہ بلوچ جہد کو زیادہ سے زیادہ بین الاقوامی سطح پر اجاگر کیا جائے اور اس کیلئے اگر کوئی جہدکار اپنا کردار ادا کرنا چاہتا ہے تو بی آر پی جتنی ہوسکے انکی رہنمائی اور مدد کرنے کیلئے تیار ہے۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close