عمران خان نیازی کا ہندوستانی بھائی

عنوان : اصل چهره
عمران خان نیازی کا ہندوستانی بھائی

کوئٹہ/مضمون (ریپبلکن نیوز)انڈین پائلٹ جو پاکستانی علاقے میں طیاره تباه ہونے پر گرفتار ہوا، کو اچھا کھانا، اچھے کپڑے اور اچھی رہائش فرائم کی گئی، پاکستانی فوج کو شاید اب اقوامِ متحدہ کے قوانین یاد آگئے ہیں۔

پاکستانی فوج کی شاید دنیا کے سامنے اپنی انسان دوستی عالمی قانون کی پاسداری انصاف پسندی پیش کرنے کی کوشش ہو، عالم اقوام کے سامنے اپنی ناک اونچی کرنے کا بهترین زریعہ بھی یہی ہے۔ اگر آپ بھارتی جنگی قیدی کو رہا نه بھی کریں تو دنیا آپ کا کچھ بھی بگاڈ نہیں سکتی لیکن انڈین میڈیا آسمان سر پر اٹھالیگا اور اقوام متحدہ میں جنگی قیدی کے مسله پر سوال ضرور اٹھے گا۔

وزیر اعظم نیازی پاکستانی فوج کے اعلٰی حکام ہندوستان کے ساتھ حالیه تنازے پر جس بہترین بھائی چارے امن پسندی عالمی رواداری کا نغمه گن گنا رہے ہیں، دنیا والوں اس امن پسند انسان دوست ریاست که مکرو چهرے کی اصل داستان اور روداد درد سندھ پختون خواه اور بلوچستان میں آکر دیکھیں۔

کاش سوات وزیرستان پختون علاقه جات اندرون سندھ کراچی اور بلوچستان کے سفید ریش بزرگ و جوان بچے عورتیں علماء طلباء سیاسی ورکر ادیب و دانشور جنهیں جهادی فراری اور ملک دشمن بھارتی افغانی ایرانی ایجنٹ کا خطاب سے نواز کر بے نام و نشان ٹارچر سلوں میں ڈال دیا جاتا ہے اور روز درجنوں کے حساب سے ٹارچر زده لاشوں کا تحفه دیا جاتا ہے۔

پاکستان کے ریاستی ادارے بقول ان کے ریاست دشمن عناصر کو اچھا سبق دے رہے ہیں که ان کی آنے والی نسلیں بھی اس سبق کو یاد رکھیں۔ جناب زرا بھائی چاره خیرسگالی امن پسندی برابری اپنے ملک کے اندر بھی دکھائیں۔

انسانی حقوق کی تنظیموں کے رپورٹ اس بات کا  چیخ چیخ کر اقرار کرتے ہیں کے آپ معصوم نهتے لوگوں پر تشدد کے نفسیاتی امراض میں شدید مبتلا ہیں۔

بقول میڈیا پاکستان اور بھارت کے درمیان حالیہ کشیدگی کے بعد ہونے والے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بھارت کے گرفتار پائلٹ کو جذبہ غیر سگالی کے تحت کل رہا کردیں گے”۔  مبارک ہو  آپ بهت بڑا کام کرنے جارہے ہیں۔

ریاست مقدم پاکستان ہندو و ہندوستان کو اپنا ازلی دشمن سمجھتی آرہی ہے جهاں اسلامی جهادی کلچر اس فلسفه کی بنیاد پر پھیلا جاتا ہے که اس نام نهاد اسلامی ریاست کو یه چنده پر پلنی والی نسل سپوٹ کرے اس کے غیر قانونی عالمی قوانین سے ماورا جنگوں میں ان کی ڈکٹیشن پر کام کرے۔  اسی جهادی کلچر کے بلبوتے پر ایران افغانسان ہندوستان عراق شام امریکه یورپ میں شدت پسندی کے جو واقعات ہوتے ہیں ان کی کھڑی کهیں نا کهیں پاکستانی جهادی ماسٹر مائنڈ جنریلوں کے ڈراینگ روم تک ضرورجا ملتی ہے۔

عمران خان نے کہا کہ برصغیر میں دنیا کے سب سے زیادہ غریب لوگ رہتے ہیں، برصغیر کے آگے بڑھنے کے لیے امن ضروری ہے ”
امن اور آپ ههههههه ،اس صدی کا سب سے بامزاه جھوٹ ۔ زرا اپنے کرتوتوں پر ایک نظر کرم عنایت فرمائیں۔

بات جنیوا کنوینشن کے اصولوں اور خیرسگاری کے پیغام کی ہورہی تھی جو میرے خیال میں وقتی صورتحال میں اندوستان کو بھلانے اور جنگی دائرے کو کم کرنے کے سوا اور کچھ نهیں جو شاید روتے ہوئے بچے کو لالی پوپ دے کر خاموش کرنے جیسا ہے۔ ریاست پاکستان کے چتھری تلے جهادی کلچر کی چندوں پر چلنی والی پیداواری صنعت سے دنیا کے امن کو جو نقصان پہنچ رہا ہے اس کی بھیانک داستان پر توبہ توبه ۔ بقول کسی کے ” ظالم کو مشکل وقت میں ہی بات کی صیح سمجھ آتی ہے۔پاکستان کو جب چھوٹ لگتی ہے تب درد کا احساس ہوتا ہے۔

تحریر ساربان بلوچ

نوٹ: درج بالا خیالات مصنف کی اپنی رائے ہے ریپبلکن نیوز نیٹورک اور اسکی پالیسی کا مضمون یا لکھاری کے موقف سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button