پُرامن طلباء پر تشدد ریاست کا بلوچ قوم سے نفرت کا اظہار ہے، بی آر ایس او

کوئٹہ (ریپبلکن نیو) بلوچ ریپبلکن اسٹوڈنٹس آرگناہزیشن کے مر کزی ترجمان نے اسلام آباد کے قائداعظم یونیورسٹی میں زیرِ تعلیم بلوچ اور پشتون طلباء پر تشدد اور گرفتاریوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پر امن بلوچ اور پشتون طلباء پر اسلام آباد پولیس کی تشدد درحقیقت وفاق کا بلوچ اور پشتون سے اظہارِ نفرت ہے ۔ بلوچستان میں موثر تعلیمی نظام نہ ہونے کی وجہ سے بلوچ طلباء پنجاب اوردیگر صوبوں کا رخ کرتے ہیں لیکن وہاں بھی ریاستی فورسز انہیں سکون سے تعلیم حاصل کرنے نہیں دیتے۔ بلوچ اور پشتون طلباء کو یونیورسٹی سے نکالنا مذکورہ اقوام کو تعلیم سے دور رکھنے کی ریاستی سازش کا حصہ ہے جس کے خلاف تمام محکوم اقوام کو متحد ہوکر جدوجہد کرنے ہوگی۔ بی آر ایس او کے ترجمان نے مزید کہا کہ پر امن طلباء پر لاٹھی چارج کی اجازت دنیا کے کسی بھی ملک کا قانون نہیں دیتالیکن پاکستان شاہد ہی واحد ملک ہے جہاں محکوم اقوام کے تعلیم حاصل کرنے پر بھی پابندی لگائی جا رہی ہے۔ اور ہر گزرتے دن کے ساتھ محکوم اقوام کے لیے مشکلات میں اضافہ کیا جا رہا ہے۔ ترجمان نے اسلام آباد میں رونما ہونے والے واقعہ کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے ریاستی سازش قرار دیتے ہوئے انسانی حقوق کے داروں اور اقوام متحدہ سے درخواست کی ہے کہ وہ پاکستان میں پشتون ، بلوچ اور دیگر محکوم اقوام پر ہونے والے ریاستی مظالم کے خلاف اپنا آوا ز بلند کریں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close