بی ایل ایف نے سرنڈر کرنے والے تین سرمچاروں کے ہلاکت کی ذمہ داری قبول کرلی

BLF 8کوئٹہ ( ریپبلکن نیوز)  بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے کہا کہ تین مہینے پہلے تنظیم کے تین سرمچاروں کو تنظیمی تحویل میں لیکر تحقیق اور پوچھ گچھ کے بعد آج سزا کے طور پر ہلاک کیا۔ ان کے نام وحید ولد میا عرف ساربان، عنایت ولد مولابخش ولد عرف درا اور اسلم ولد مدی خان عرف میراث ہیں۔ انہیں کیچ کے علاقے دشت میں کپکپار کراس پر ہلاک کیا۔ انہوں نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون کے ذریعے کہا کہ چھ مہینے پہلے ریاست کے سامنے سرنڈر ہو کر بلوچ قومی جہد کے خلاف کام کرنے کی حامی بھر لی تھی۔ اسی منصوبے کے تحت ان کا سرنڈر خفیہ رکھا گیا تھا اور بلوچ آزادی پسندوں کے درمیان موجود ہوکر کام کرنے کی ہدایت دی گئی تھی۔ وہ ملٹری انٹیلیجنس (ایم آئی) کے آفیسر اعظم نامی شخص کے ذریعے کام کررہے تھے۔ تفتیش اور پوچھ گچھ کے دوران انہوں نے اس ایم آئی افسر تک پہنچانے اور انہیں سرنڈر کروانے والوں کے نام بھی بتائے ہیں۔ ان کے نام مناسب وقت پر سامنے لائیں گے۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ وہ بلوچوں کے گھر جلانے، آزادی پسندوں کی مخبری اور قتل کرنے کے منصوبوں میں شامل ہیں۔ وہ یہی سمجھ رہے تھے کہ وہ اب بھی پوشیدہ ہیں۔ تین مہینے پہلے انہیں کیمپ بلاکر تفتیش شروع کی گئی ۔انہوں نے اعتراف کیا کہ انہیں تنظیم کے دو سرکردہ رہنماؤں کے قتل کی ذمہ داری دی گئی تھی، مگر سخت سیکورٹی اور ان کے نقل و حرکت کی وجہ سے یہ ممکن نہیں ہوسکا۔ ان رہنماؤں کے قتل کا طریقہ کار بھی وہیں سے وضع کی گئی تھی۔ ان کے علاقائی سربراہ اور ان کے کارندے سرمچاروں کے نشانے پر ہیں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close