قندھار میں طالبان کا خودکش بم حملہ، 43 فوجی ہلاک

نیوزڈیسک(ریپبلکن نیوز) افغانستان کے جنوبی صوبے قندھار میں ایک فوجی بیس پرخودکش بمباروں نے حملہ کیا  ہے جس کے نتیجے میں 43 فوجی ہلاک ،9 زخمی اور 6 لاپتا ہو گئے ہیں۔ افغان میڈیا کے مطابق خودکش بمباروں نے ضلع میوند میں واقع فوجی اڈے کو نشانہ بنایا.

حملے کے بعد سیکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لیکر سرچ آپریشن شروع کردیا ہے۔زخمیوں کو قریبی اسپتال منتقل کیا گیا جہاں بعض زخمیوں کی حالت تشویش ناک بتائی جاتی ہے اور ہلاکتوں میں اضافہ کا خدشہ ہے۔

افغان سیکیورٹی فورسز کے مطابق دہشت گردوں نے پہلے بارود سے بھری گاڑی کو دھماکے سے اڑایا۔اس کے بعد انھوں نے ملٹری بیس پر فائرنگ شروع کردی۔اس فوجی اڈے پر خود کش حملے اور فائرنگ کے دوران غیر ملکی طیاروں نے فضائی حملے میں حملہ آوروں کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں 10 طالبان مارے گئے۔

قندھار پولیس کے سربراہ نے حملے میں ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے۔افغان وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا ہے کہ میوند کے علاقے چشمو میں واقع اس فوجی اڈے پر 60 فوجی تعینات تھے۔حملے کے بعد ان میں صرف دو زندہ بچے ہیں۔نو زخمی ہیں اور چھے ابھی تک لاپتا ہیں۔طالبان نے اس حملے ذمے داری قبول کرلی ہے اور یہ دعویٰ کیا ہے کہ حملے میں  تمام فوجی مارے گئے ہیں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close