بلوچستان کی کٹ پتلی حکومت کے ترجمان انور الحق کاکڑ نے مستونگ کے باشندوں کو دہشتگرد قرار دے دیا

بلوچستان کی سیکیولر معاشرے کو مذہبی انتہاء پسندی کی جانب دھکیلنے میں پاکستانی اسٹیبلشمنٹ گزشتہ کئی سالوں سے عمل پیرا ہے

کوئٹہ(ریپبلکن نیوز) بلوچستان کی کٹ پتلی حکومت کے ترجمان انور الحق کاکڑ نے کہا ہے ضلع مستونگ کے لوگ مزہبی انتہا پسند تنظیموں سے منسلک ہیں۔ اانورالحقکاکڑکاکہنا ہے کہ ضلع مستونگ اور ملحقہ علاقوں کے لوگ دہشتگرد تنظیموں سے منسلک ہیں اور دہشتگردی کی کاروائیوں میں ملوث ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: گرجاگرپر اسلامی شددت پسندوں کی طرف سے حملے کی مذمت کرتے ہیں، نوابزادہ حیربیار مری

انہوں نے مزید کہا کہ کوئٹہ گرجا گھر میں ہونا والا خودکش دھماکے کی منصوبہ بندی افغانستان میں کی گئی تھی اور دہشتگرد تنظیمیں افغانستان سے آپریٹ کرتی ہیں جبکہ کاکڑ نے مستونگ اور ملحقہ علاقوں کے باشندوں کو دہشتگرد قرار دیتے ہوئے کہا کہ مستونگ کے لوگ دہشتگروں سے جھڑے ہیں۔

خیال رہے کہ بلوچستان کی سیکیولر معاشرے کو مذہبی انتہاء پسندی کی جانب دھکیلنے میں پاکستانی اسٹیبلشمنٹ گزشتہ کئی سالوں سے عمل پیرا ہے تاکہ بلوچستان میں فوجی آپریشن میں تیزی لانے کا جواز پیدا کیا جاسکے اور  بلوچ آزادی کی تحریک کے خلاف مکمل طاقت کے استعمال کو ممکن بنایا جائے۔

انورالحق کاکڑ کا بیان مستونگ اور گردونواح میں فوجی آپریشن میں تیزی لانے کا اشارہ ہے۔ خدشہ ہے کہ پاکستانی فوج ان علاقوں میں وسیع تر فوجی آپریشن کے ذریعے بلوچوں کو نشانہ بنانے کے بعد اپنے پھالے ہوئے کرایہ کے مذہبی لوگوں کو تعینات کریگی۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close