بی ایل ایف نےفورسز پر حملوں کی ذمہ داری قبول کرلی

کوئٹہ (ریپبلکن نیوز)بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے پاکستانی فورسز پر مختلف حملوں کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا کہ سرمچاروں نے منگل کے روز آواران کے علاقے پیراندر میں زومدان کے مقام پر فوجی قافلے کی پکٹ سیکورٹی پر حملہ کرکے تین اہلکاروں کو ہلاک کیا۔ پاکستانی فوج نے زومدان میں آپریشن کرکے حواس باختگی میں خواتین اور بچوں کی بد احترامی کے ساتھ انھیں حراساں کیااور گھروں میں میں توڑ پھوڑ کی۔گزشتہ رات مشکے گجر آرمی کیمپ پر سرمچاروں نے بھاری ہتھیاروں سے حملہ کر کے فوج کو نقصان پہنچایا،واپسی پر ریاستی فوج نے سرمچاروں کو گھیرنے کی کوشش کی جس پر رات کے آخری پہر سے علی الصبح سرمچاروں نے بہادری سے لڑتے ہوئے آرمی کے کئی اہلکاروں کو ہلاک و زخمی کیا اوربحفاظت نکلنے میں کامیاب ہوگئے۔منگل کی صبح پاکستانی آرمی کو کوہ اسپیت کے مقام پر بھاری ہتھیاروں سے نشانہ بنایا جس سے آرمی کے کئی اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے۔ ترجمان نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون کے ذریعے مزید کہا کہ پانچ اکتوبر کو سرمچاروں نے حسن ولد محمد علی سکنہ ملانٹ کو گرفتار کیا۔ پوچھ گچھ اور تفتیش کے دوران اُس نے اعتراف کیا کہ وہ فوج کے ساتھ رابطے میں ہے۔ تمپ کے میجر واجد کے ساتھ تعلقات اور ملانٹ میں آرمی چوکی کیلئے جگہ کی نشاندہی اور آباد کرنے کیلئے ساتھ دیا ہے۔ ساتھ ہی دو اہم ریاستی کاسہ لیسوں کے ساتھ ایجنٹ کا کردار بھی ادا کیا ہے۔ صوبیدار حکمت کیلئے کراچی و دیگر علاقوں سے ضروری سامان لایا کرتا تھا۔ ملانٹ کے آزادی پسندوں کی نشاندہی کے ساتھ ساتھ گومازی میں سرمچاروں کی نقل و حرکت دیکھنے اور فوج کو اطلاع دینے کی ذمہ داری کا ٹاسک دیا گیا تھا۔ ان سب باتوں کو قبول اوردوسری ثبوتوں کی بنا کر اُسے آج موت کی سزا دیکر ہلاک کیا گیا۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker