بی آر اے نے تنظیم کے منحرف کمانڈرعالم عرف ساچان کے ہلاکت کی ذمہ داری قبول کرلی

کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) ہمارے سرمچاروں نے تنظیم سے منحرف علاقائی کمانڈر عالم عرف ساچان کو گزشتہ دنوں حراست میں کیا تھا اس دوران اس سے مکمل تفتیش کی گئی جس میں عالم نے اعتراف کہ ملا برکت کے زریعے اس نے کوہ مراد میں زیارت کو جانے کے بہانے میں تربت میں قابض افواج کے سامنے ہتھیار ڈال دیئے اور اس کے ساتھی طوفان نے عالم کے سرنڈر ہونے سے کچھ دن قبل ہی ہتھیار ڈال دیئے تھے جبکہ عالم کو اس منصوبے کے تحت فوٹو سیشن سے دور رکھا گیا تاکہ اس کو سرمچاروں کے خلاف استعمال کیا جا سکے جبکہ طوفان کے سرنڈر کیلئے اورماڑہ میں ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا جس کی وجہ ملا برکت اور عالم کے درمیان اختلافات بھی پیدا ہوگئے۔ عالم نے چھ ماہ قبل ہی پارٹی کے سرگرمیوں میں حصہ لینے میں ٹال مٹول سے کام لیا اور تنظیم سے مالی حوالے سے تنگ دستی کو جواز بنایا جبکہ تنظیم نے اس کے تمام ضروریات کو پورا کیا لیکن وہ پھر بھی تنظیم کے سرگرمیوں سے مکمل دور رہا اس تمام صورت حال کے بعد تنظیم نے منحرف عالم پر نظر رکھا اس دوران سے نے متعدد بار ملا برکت اور اس کے بیٹے سے کئی ملاقاتیں کی اور آخر میں ان کے زریعے ریاست کے سامنے سجدہ ریز ہوگئے اور تحریک کے خلاف کام کرنے کیلئے آمادہ ہوگئے ان تمام باتوں کو اعتراف عالم نے خود کیا جس کے بعد بلوچ سرزمین اور تنظیم سے غداری کے مرتکب ہونے پر اس سزا موت دی گئی ۔ بلوچ نوجوانوں کو تحریک سے الگ کرنے کیلئے ریاستی ادارے مختلف حربوں کا استعمال کررہے ہیں تاکہ نام نہاد راہداری کو کامیاب بنایا جا سکے لیکن انھہیں ان ہزاروں شہیدوں کے لہوں کو نہیں بھولنا چایئے جنہوں نے اپنے خون سرزمیں کے دفاع میں قابضین کے خلاف بہایا ہے اور یہی ان نوجوان کےلئے بھی امتحان کی گھڑی ہے کہ وہ کھٹن حالات کا مقابلہ کرتے ہوئے ثابت قدم رہے اور ریاست کے تمام حربوں کو ناکام بناتے ہوئے جہد آزادی کو جاری رکھیں۔ سرباز بلوچ

مزید خبریں اسی بارے میں

Close