آئی ایس پی آر کے میڈیا سیل کو مانیٹر کیا جائے.عاصمہ جہانگیر

پاکستان (ریپبلکن نیوز) جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں جسٹس قاضی فائز عیسیٰ پر مشتمل Aasma32 رکنی بنچ نے وزیر اطلاعات ونشریات کی جانب سے عدالتی حکم عدولی کے خلاف حامد میر، چیئرمین پیمرا اور دیگر کی درخواست پر کیس کی سماعت کی۔

ایڈوکیٹ عاصمہ جہانگیر نے عدالت کو بتایا کہ ہم حکومت کی کارکردگی کے حوالے سے بات کرتے آئے ہیں لیکن پاک فوج کے میڈیا سیل کے بارے میں بھی بات ہونی چاہیے۔۔

انہوں نے کہا کہ پاک فوج کے لیے ہمیشہ بجٹ کا بہت بڑا حصہ مختص کیا جاتا ہے لیکن اب یہ دفاعی بجٹ ملک میں سیاست دانوں کو بدنام کرنے کے لیے استعمال کیا جارہا ہے۔

عاصمہ جہانگیر نے کہا کہ آئی ایس پی آر سوشل میڈیا پر بہت سرگرم ہے اور آئی سی پی آر کے ٹوئٹس سوشل میڈیا میں اہم موضوع بحث بن گئے جو بہت سے لوگوں کے لیے نقصان دہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عدالت نوٹس لے کہ آئی ایس پی آر کس ضابطہ اخلاق کے تحت میڈیا سیل چلا رہا ہے۔

جس پر عدالت نےعاصمہ جہانگیر کو آئی ایس پی آر میڈیا سیل کے حوالے سے پیٹشن دائر کرنے کی ہدایت کی۔

صحافی اسد کھرل کی وزیر اعظم نواز شریف کی بیٹی مریم صفدر کی جانب سے حکومتی میڈیا سیل سنبھالنے کے حوالے سے پیٹشن دائر کرنے کے ردعمل میں ایڈوکیٹ عاصمہ جہانگیر نے عدالت میں آئی ایس پی آر کے میڈیا سیل کی نگرانی کرنے کی استدعا کی۔

عدالت کو درخواست گزار نے بتایا گیا کہ الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا میں اشتہارات کے لیے اب تک 9 ارب روپے خرچ کیے چکے ہیں، حکومتی میڈیا سیل کو چلانے کے لیے 38 ملازمین کو پرکشش تنخواہ دی جا رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان اشتہارت کو حکومتی اعلیٰ شخصیات کے کارناموں کو بیان کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، اشتہارات میں ذاتی تشہیرسے عدالت احکامات کی ورزی کی جارہی ہے۔

جس کے بعد سپریم کورٹ نے پبلسٹی فنڈز کو ذاتی تشہیر کے لیے استعمال کرنے پر حکومت سے جواب طلب کرلیا۔

عدالت نے کہا کہ پیمرا ( پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی) غیر جانب دار نظر نہیں آتا، غیر جانب داری کے بغیر پمیرا کی تشکیل نامکمل ہے۔

عدالت نے پیمرا کو مکمل طور پر فعال کرنے اور پبلک سروس میسجز کے لیے الیکٹرانک میڈیا میں 10 فیصد کوٹہ مختص کرنے کا حکم دیا۔

چیئرمین پیمرا ابصار عالم نے عدالت کو ایک ہفتے کے اندر عدالتی حکم کی تعمیل کرنے کی یقین دہانی کروائی۔

ابصار عالم کا کہنا تھا کہ ان قوانین کا مقصد ٹاک شوز میں غیر مہذب اور غیر شائشہ زبان استعمال کرنے سے روکنا ہے لیکن جب سے پیمرا کے اختیارات محدود کیے گئے ہیں تب سے وہ ان کے خلاف کارروائی کرنے سے قاصر ہیں۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ قانون کے مطابق پیمرا صرف میڈیا چینلز کے مالکان کے خلاف صرف ایک لاکھ روپے جرمانہ عائد کرسکتا ہے لیکن جب پابندی عائد کرنے کی بات آتی ہے تو مالکان عدالت عظمیٰ سے حکم امنتاعی لے لیتے ہیں۔

انہوں نے عدالت کو بتایا کہ وہ ان نجی چینلزکے مالکان کے خلاف کی گئی کارروائی کی رپورٹ عدالت میں پیش کریں گے۔

سپریم کورٹ کے پریس ایسوسی ایشن کے سابق صدر غلام نبی یوسف زئی نے کہا کہ کوئی بھی میڈیا کے ضابطہ اخلاق کی پاسداری کیسے کرسکتا ہے جب اسٹیک ہولڈرز اور صحافیوں کی سیکیورٹی انتظامات، ہیلتھ کیئر اور دیگر ضروریات کو نظر انداز کیے جاتے ہوں۔

سینئر وکیل اعتزاز احسن نے صحافیوں کے مسائل سے اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ صحافیوں کے مسائل حل کئے جائیں اور سول سوسائٹی سے ایسی کمیٹٰی بنائی جائے جو میڈیا کے لیے ضابطہ اخلاق مرتب دے سکے۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close