ڈیرہ بگٹی میں بم دھماکوں اور ریاستی آلہ کاروں کی ہلاکت کی زمہ داری بی ایل ٹی نے قبول کر لی۔

کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچ لبریشن ٹائیگرز کے ترجمان میران بلوچ نے میڈیا کو جاری بیان میں کہا ہےکہ بلوچ سرمچاروں نے آج ڈیرہ بگٹی کے علاقے چبدر میں ریاستی ڈیتھ سکواڈ کے اہم کارندہ علم دین ولد صوبانی بگٹی کو ریموٹ کنٹرول بم حملے میں نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوا اور ہماری اطلاعات کے مطابق اس نے ہسپتال میں دم توڑ گئے علم دین ریاستی ایما پر بلوچ سرمچاروں کے خلاف کاروائیوں میں براہ راست ملوث تھا گزشتہ برس ستمبر میں چبدر میں بلوچ ریپبلکن آرمی کے سنیئر ساتھی تنگو عرف تولا بگٹی اور کلیری بگٹی کے شہادت میں براہ راست ملوث تھا علم دین کے دیگر ساتھی بھی بلوچ سرمچاروں کے نشانے پر ہیں جنھہیں جلد منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا ڈیرہ بگٹی میں ہی کوڑدان کے مقام پر ریاستی ڈیتھ سکواڈ کے کارندوں کو بم حملے کا نشانہ بنایا جب وہ اپنے کیمپ سے شہر کی جانب جارہے تھے حملے میں حاصل کرمازئی بگٹی ہلاک اور اس کا ساتھی زخمی ہوا ہے۔ مزکورہ دونوں افراد چند ٹکوں کی خاطر ریاست کے ہاتھوں استعمال ہورہے تھے جو بلوچ سرمچاروں، ان کے خاندان اور ہمدردوں کے معلومات ریاست کو فراہم کرنے سمیت فوجی آپریشنوں میں بھی قابض افواج سے معاونت کرتے تھے۔ ریاستی قابض افواج و ان کے آلہ کاروں کے خلاف ہماری کارروائیاں بلوچستان کی مکمل آزادی تک جاری رہیں گے۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close