بلوچستان میں جاری فوجی آپریشن میں انسانی حقوق کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں۔ شفیع برفت

جرمنی( ریپبلکن نیوز)سندھی قوم پرست رہنماء شفیع برفت نے اپنے ایک بیان میں بلوچستان میں حالیہ فوجی آپریشن کی مزمت کرتے ہوے کہاکہ پاکستانی سفاک فوج کی طرف سے بلوچ قوم کی قومی نسل کشی اور بلوچوں کے خلاف معاشی و اقتصادی دہشتگردی جاری ہے۔

ڈیرہ بگٹی ، کوہلو ، کاہان، مکران ، خاران سمیت بلوچ سرزمین پر پنجابی فوج کی طرف سے عام بلوچ بزرگوں، عورتوں اور بچوں کے خلاف جارحیت، بربریت، قتل غارت، غیر انسانی تشدد روز کا معمول بنا دیا گیا ہے۔  بلوچوں کے گھروں اور کسبوں کو جلایا جارہا ہے، مال مویشی قیمتی گھریلو سامان کو لوٹا جا رہا ہے، بلوچوں کو اپنی ہی سرزمین پر پاکستانی فاشسٹ ریاست اور آرمی نے ریڈ انڈین بنانے کی سازشیں شروع کر دی ہیں۔

پاکستانی ریاست کی طرف سے بلوچستان میں مسلسل انسانی حقوق کی دھجیاں اڑائی جا رہیں ہیں، پنجابی توسیع پسندی، استعماریت، ننگی جارحیت، نسل کشی، سفاکیت بلوچستان کے ہر خطے، کسبے، علاقے، بستی گاؤں میں جاری ہے۔ بلوچ قومی تحریک اور قومی فکر کے خلاف پاکستانی ریاست کی میڈیا کی جانب سے من گھڑت زہریلی پروپیگنڈا کی جا رہی ہے اور ریاستی ادارے بلوچ قومی تحریک کو غیر ملکی ایجنٹ کے طور پر میڈیا میں پیش کرنے کی گمراہ کن ، منفی و زہریلی پروپیگنڈا کر کے بلوچ قومی تحریک اور بلوچ قوم کے خلاف ایک شدید نفسیاتی جنگ مسلط کی ہوئی ہے جس طرح لاکھوں کی تعداد میں باشعور پشتون قوم کے غیرتمند بیٹوں کی طرف سے جب ” یہ جو دہشتگردی ہے اس کے پیچھے وردی ہے ” کا عوامی نعرا لگا کر جب پاکستان کی سفاکیت اور بربریت کو ننگا کیا ہے تب ریاست اپنی بیہودگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پشتون قوم کی اس قومی بیداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے پنجابی فوج کے ظلم کے خلاف اٹھاۓ گئے اپنے قومی آواز اور سیاسی حوالے سے اٹھنے والی اس پشتون قومی بیداری تحریک کو بھی ریاستی دلال میڈیا اور فوجی سربراہ پشتون قومی بیداری تحریک کے خلاف بھی یہ الزام لگا رہے ہیں کے یہ تحریک بھی غیر ملکی اشارے پر چلائی جا رہی ہے۔

سندھ کی سیاسی صورتحال بھی اس سے ملتی جلتی ہے اور مختلف نہیں ہے جس کا مطلب یہ ہوا کے پاکستان ( پنجابی استعمار ) کی نظر میں سندھی، بلوچ یا پشتون قومیں جب بھی اپنے قومی، تاریخی، سیاسی اور وطنی بحالی اور آزادی کے لیے لاکھوں کی تعداد میں آواز بلند کرینگی تو مظلوم قوموں کے ان لاکھوں کی تعداد میں عوامی بیداری کو بھی پنجابی سفاک ،بدمعاش اور مکار ریاست غیر ملکی اشارے پر چلنے والی جدوجہد کو منفی اور زہریلی پروپیگنڈا کرتے ہوئے ان کے خلاف بہتان بازی اور الزام تراشی کی بے حیائی جاری رکھی جاۓگی جس طرح ریاست اب کر رہی ہے۔ جو پاکستانی ریاست اور فوج کی بے حیائی بیہودگی ، بدمعاشی اور مکاری کی انتہا ہے، ہم ریاست کی طرف سے، مظلوم قوموں بلوچوں، پشتونوں اور سندھیوں کے خلاف مسلط کی گئی نفسیاتی جنگ ، جارحیت ، نسل کشی اور قبضہ کو مکمل رد کرتے ہیں اور انسانی حقوق کی پامالی کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔

ان حالت میں مظلوم قوموں کو پنجابی استعمار کے خلاف منظم و متحد ہوکر سیاسی اتحاد بنانا ہوگا اور پنجابی جبری الحاق، قبضہ، غلامی کے خلاف مشترکہ جدوجہد جو کے آج کی تاریخ کی اہم ترین ضرورت ہے۔ اس طرف سنجیدگی کے ساتھ سیاسی پیش قدمی کرنی ہوگی۔ مظلوم قوموں کو پنجاب کے ظلم اور غلامی کے خلاف سیاسی اتحاد و مشترکہ جدوجہد کے لیے جسمم مظلوم قوموں کے سیاسی قیادت، دانشوروں اور قومی کارکنوں کو اپیل کرتی ہے۔

متعلقہ عنوانات

مزید خبریں اسی بارے میں

Close