برطانیہ اور یورپی یونین بریگزٹ کی تاریخ اکتوبر تک موخر کرنے پر متفق

نیوز ڈیسک (ریپبلکن نیوز) یورپین کونسل کے سربراہ ڈونلڈ ٹسک نے کہا ہے کہ برطانیہ اور یورپی یونین نے 31 اکتوبر تک بریگزٹ کی ’لچکدار توسیع‘ پر اتفاق کر لیا ہے۔

بریگزٹ کی تاریخ میں توسیع کے اس معاہدے پر اتفاق برسلز میں ہونے والے یورپی یونین کے سربراہی اجلاس میں ہوا جو کہ پانچ گھنٹے جاری رہا۔

ڈونلڈ ٹسک کا کہنا تھا ’برطانوی دوستوں سے میری درخواست ہے کہ مہربانی کر کے اس بار وقت ضائع نہ کریں۔‘

یورپین کونسل کے سربراہ نے ایک پریس کانفرنس میں صحافیوں کو بتایا کہ توسیع کے وقت کے دوران ’کارروائی کا مقصد مکمل طور پر برطانیہ کے ہاتھوں میں ہو گا۔ وہ ابھی بھی انخلا کے معاہدے کی تصدیق کر سکتے ہیں جس میں توسیع ختم ہو سکتی ہے۔‘

ڈونلڈ ٹسک نے کہا کہ برطانیہ اپنی حکمت عملی پر نظر ثانی کر سکتا ہے یا آرٹیکل 50 کو منسوخ کرنے اور بریگزٹ کو ایک ساتھ منسوخ کر سکتا ہے۔

اس سے قبل برطانوی وزیراعظم ٹریزا مے نے صحافیوں کو بتایا تھا کہ وہ چاہتی ہیں کہ برطانیہ کے یورپی یونین سے نکلنے کی تاریخ کو 30 جون تک توسیع دی جائے۔

ٹریزا مے نے نومبر 2018 میں یورپی یونین کے ساتھ بریگزٹ معاہدے پر اتفاق کر لیا تھا مگر اس معاہدے کو دو مرتبہ برطانوی پارلیمان میں مسترد کیا جا چکا ہے جبکہ جمعے کو صرف علیحدگی کے معاہدے کو 58 ووٹوں سے مسترد کر دیا گیا۔

پارلیمانی ارکان نے بریگزٹ پر آمادگی ظاہر کرنے کے لیے دو مرتبہ ووٹنگ بھی کروائی مگر کسی بھی معاہدے کو اکثریت نہ ملی۔

برطانیہ نے 29 مارچ کو یورپی یونین سے علیحدگی اختیار کرنی تھی لیکن ٹریزا مے نے یہ جانتے ہوئے مختصر توسیع پر اتفاق کیا کہ پارلیمان ڈیڈلائن تک معاہدے پر رضامند نہیں ہو گی۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button