بلوچستان لبریشن فرنٹ کا ایک اور سرمچار مادرِ وطن کی دفاع میں شہید ہوگیا

کوئٹہ(ریپبلکن نیوز) قبضہ گیرپاکستانی فورسز نے بلوچستان کے ضلع آواران کے علاقے جھاو میں ایک بلوچ فرزند کی گولیوں سے چھلنی لاش کو ہسپتال انتظامیہ کے حوالے کردیا۔

نمائندہ ریپبلکن نیوز کے مطابق آج پاکستانی فورسز نے جھاو میں ایک بلوچ فرزند کی لاش کو ہسپتال انتظامیہ کے حوالے کیا ہے جس کی شناخت معیم خان ولد محمد موسیٰ سے ہوگئی ہے جو لال بازار جھاو کا رہائشی تھا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز جھاو میں ریاستی فورسز اور بلوچستان لبریشن فرنٹ کے سرمچاروں کے درمیان ہونے والے ایک جھڑپ میں بی ایل ایف کے تین سرمچار شہید ہوگئے تھے جن کی شناخت راشد علی ولد بشیر احمد، اورنگزیب ولد غلام قادر اور گل شیر ولد دلمراد ہوگئی تھیں،  جبکہ معیم خان وہاں سے بحفاظت نکلنے میں کامیاب ہوگئے تھے لیکن فورسز نے پورے علاقے کو محاصرے میں لے لیا تھا جس کی وجہ سے معیم خان کا وہاں سے نکلنا نا ممکن ہوگیا تھا۔معیم خان نے بہادری سے ریاستی فورسز کا مقابلہ کیا اور بلوچ گلزمین کی دفاع میں شہید ہوگئے۔

متعلقہ عنوانات

مزید خبریں اسی بارے میں

Close