فوجی جارحیت ؛ نصیر آباد سے دو کمسن چرواہا اغوا، سوئی میں خاتون بچے سمیت شہید

ڈیرہ بگٹی (ریپبلکن نیوز) نصیر آباد کے علاقے چھتر اور ڈیرہ بگٹی کے علاقے اُوچ میں پاکستانی فوج کی جارحیت چوتھے روز بھی جاری، آمدہ اطلاعات کے مطابق پاکستانی افواج نے سوئی کے قریب شاری دربار میں ایک گھر پر فائرنگ کر کے ایک خاتوں کو اس کی بچی سمیت شہید کردیا، خاتوں کی شناخت لالین زوجہ شاہ گل بگٹی کے نام سے ہوئی ہے اطلاعت کے مطابق فورسز بے شاری دربار سے متعدد لوگوں کو جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں کو اپنے ٹرکوں میں ڈال کر سوئی آرمی چھاونی منعتقل کردیا ہے ادھر نصیر آباد کے علاقے چھتر سے فورسز نے دو کمسن چرواہوں کو ان کے 150 سے زائد بکیریوں سمیت اٹھا لیا ہے خیال رہے کہ نصر آباد اور ڈیرہ بگٹی کے نواحی علاقوں میں گزشتہ چار روز سے فوجی جارحیت جاری ہے جس میں اب تک خواتین اور بچوں سمیت دس افراد شہید جبکہ 200 سے زائد افراد کو ریاستی فورسز نے حراست میں لینے کے بعد فوجی کیمپوں میں منعتقل کردیا ہےجبکہ چھتر سے اغوا کیئے گئے مزید دس افراد کی شناخت ہوگئی ہے جن میں ایک بیس روزہ اور ایک تین سالہ بچے بھی شامل ہے۔ جن کے نام موزو زوجہ لقمان بگٹی، مہرزادی زوجہ محمد عالم بگٹی، جوری زوجہ مومن بگٹی، سناہت بی بی زوجہ مومن بگٹی، مہر خاتوں زوجہ محمد عمر بگٹی، گل خان ولد محمد عمر بگٹی عمر تین سال، ولی محمد ولد مومن بگٹی عمر بیس روز، نوری بنت مومن بگٹی، سدوری بنت مومن بگٹی، گل بی بی بنت مومن بگٹی کے ناموں سے ہوئے ہیں۔ 

مزید خبریں اسی بارے میں

Close