نئی حکمت عملی تیار، اسنائپر شوٹرز کی تعداد میں اضافہ۔ بی ایل ایف 

کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے پاکستانی فوج پر حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا کہ 2 جولائی کی صبح 10 بجے سرمچاروں نے دشت میں کمبیل کراس پر پاکستانی فوج کی ایک گاڑی کو ریموٹ کنٹرول بم سے نشانہ بنایا۔ جس سے گاڑی تباہ اور اس میں سوار تمام اہلکار ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں ۔ ۔ ترجمان نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون کے ذریعے کہا کہ حالات کو مد نظر رکھ کر ایک حکمت عملی کے تحت بی ایل ایف میں اسنائپر شوٹرز (نشانہ بازوں) کی تعداد میں اضافہ کیا گیا ہے۔ اب تک پچاس نشانہ باز تربیت مکمل کرچکے ہیں اور جلد ہی اپنے اپنے ٹارگٹ کی جانب روانہ ہوکر مطلوبہ اہداف کو نشانہ بنائیں گے۔ جبکہ دوسری سابقہ حکمت عملیاں بھی جاری رہیں گی۔ بعض علاقوں میں نشانہ بازوں کو خصوصی ٹاسک اور ذمہ داریاں دی جائیں گی اور دشمن کی ظالمانہ کارروائیوں کا بھر پور جواب دیا جائے گا۔ قابض فورسز نے بلوچستان میں عام نہتے شہریوں کو اغوا کے بعد قتل کرنے کے واقعات میں تیزی لائی ہے۔ قابض فورسز کی معاونت اور پیسے کی لالچ میں کچھ زر خرید آلہ کار عام شہریوں کو جہد کار پیش کرکے قتل کرواتے ہیں تاکہ ان کی تنخواہ و مراعات میں اضافہ ہو۔ مگر بی ایل ایف بلوچ عوام کی دفاع میں ان عناصر کو نشانہ بنا کر کیفر کردار تک پہنچائی گی۔ نئے اسنائپر شوٹرز کی تربیت بھی اسی حکمت عملی کا حصہ ہے۔ تمام فوجی چھاؤنیاں، چوکی اور ریاستی آلہ کار نشانہ بازوں کے ٹارگٹ پر ہیں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close