جعلی مقابلے میں زیرِ حراست چار بلوچ فرزندان شہید

کوہٹہ(ریپبلکن نیوز)  بلوچستان کے ساحلی شہر گوادر میں چار بلوچوں کی نعشیں ڈی ایچ کیو ہسپتال گوادر میں پہنچائی گئی ہیں جن کی شناخت، 14سالہ طالب علم ظفر عصاء، صابر محمد، ساجد، صلاالدین سےہوئی ہیں.
پاکستانی سیکورٹی اداروں کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ فرنٹیئر کور کے اہلکاروں نے آج صبح کلانچ کے علاقے بیلارمیں آپریشن کرتے ہوئے چار افراد کو ہلاک کر دیا ہے جن کا تعلق کالعدم علیدگی پسند تنظیموں سے ہے. 

یاد رہے کہ ساجد کریم بخش کا تعلق پسنی وارڈ 14سے ہے جسے 4سال قبل پاکستانی خفیہ اداروں کے اہلکاروں نے فورسز کے ہمراہ اغواء کیاتھا،صابر محمد  کو دو سال قبل امبی، کلانچ سے پاکستانی فورسز نے اغواء کیا تھا، طالب علم ظفر علی عصاء کو چند ماہ قبل گوادرمیں واقع اسکے گھر سے اغواء کیا گیا تھا اور چھوتے نعش کی تفصیلات ابھی آنا باقی ہیں. 

مقتولین کے اہل خانہ نے الزام عائد کیا ہے کہ ان لوگوں کو دورانِ حراست پاکستانی فورسز نے شہید کیا ہے. 

یاد رہے کہ گزشتہ کئی سالوں سے پاکستانی فورسزبلوچ لاپتہ افراد کو شہید کر کے جعلی مقابلوں کا ڈونگ رچاکر انسانی حقوق کے اداروں سے بچنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن اب پاکستانی خفیہ اداروں اور فورسز کے جنگی جرائم سے سب اچھی طرح واقف ہیں.

مزید خبریں اسی بارے میں

Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker