بار بار شرمندگی کے بعد پاکستان کا ایک بار پھر نواب براہمدغ بگٹی کی گرفتاری کیلئے انٹروپول سے رابطے کا فیصلہ

نیوز ڈیسک (ریپبلکن نیوز) حواس باختہ پاکستانی حکومت کا بلوچ رہنما نواب براہمدغ بگٹی کے گرفتاری کے سلسلے میں دوبارہ انٹروپول سے رابطے کا فیصلہ، پاکستان کی انگلیش آئن لائن اخبار ایکسپرس ٹریبون نے اپنے ایک خبر میں عالی حکومتی اہلکاروں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستانی حکومت نے ایک بار پھر فیصلہ کیا ہے کہ بلوچ قومی رہنما نواب براہمدغ بگٹی کے خلاف انٹرپول سے رابطہ کیا جائے گا تاکہ بلوچ رہنما کی گرفتاری عمل میں لائی جاسکے۔ خیال رہے کہ یہ اقدام ایسے وقت میں اٹھا جارہا ہے جب جنیوا میں مقیم بلوچستان کی آزادی کیلئے سب سےبڑا اور متحرک پارٹی بلوچ ریپبلکن پارٹی کے سربراہ نواب براہمدغ بگٹی کی قیادت میں بلوچستان کی آزادی کے حق میں ایک پرزرور مہم چلایا گیا جس کی وجہ بلوچستان کا مسئلہ دنیا بھر میں اجاگر ہوا اور پاکستان کو بے حد شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ یاد رہے کہ پاکستان اس سے قبل بھی متعدد بار بلوچ رہنما نواب براہمدغ بگٹی کی گرفتاری کیلئے انٹرپول سے رابطہ کر چکی ہیں مگر انٹروپول ہر بار انکار کرتا رہا ہے کیونکہ انٹرپول کے قوانین میں شک نمبر تین میں واضع ہے کہ سیاسی بنیادوں پر گرفتاریاں کرنے کے پابند نہیں ہے جبکہ تجزیہ کار کہتے ہیں کہ پاکستان خود  دنیا بھر میں دہشت گردی کا جڑ سمجھا جاتا ہے جس کی وجہ سے کوئی بھی بین الوامی ادارہ پاکستان کی باتوں کو سنجیدگی سے نہیں لیتا۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Close